افغانستان میں تعینات فوجی کو اس کے آفیسر نے ایسا کام کرنے کا حکم دے دیا کہ پریشان ہوکر اس نے خود کشی ہی کرلی

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) اپنے کمانڈر کا ہر حکم بلا چون و چرا ماننا ایک فوجی کی بنیادی خصوصیت ہوتی ہے لیکن برطانیہ میں ایک فوجی نے اپنے آفیسر کے ایک حکم پر پریشان ہو کر خودکشی ہی کر لی۔ یہ کیاحکم تھا؟ سن کر آپ کی حیرت کی انتہاءنہ رہے گی۔ ٹیلیگراف کی رپورٹ کے مطابق 39سالہ نیتھن ہنٹ نامی اس فوجی کو اس کے آفیسر نے بارودی سرنگوں کا سراغ لگانے اور انہیں ناکارہ بنانے کا

حکم دیا تھا جس پر وہ اس قدر ذہنی خلفشار کا شکار ہوا کہ اس نے اپنی زندگی کا ہی خاتمہ کر لیا۔ نیتھن ہنٹ 2008ءمیں برطانوی شہزادہ ہیری کے ساتھ بھی کام کر چکا ہے اور اس نے ایک بار سڑک کنارے نصب بم کا سراغ لگا کر شہزادہ ہیری کی جان بھی بچائی تھی۔نیتھن ہنٹ کی خودکشی کی تحقیقات میں معلوم ہوا ہے کہ اسے بارودی سرنگیں کی صفائی کا کوئی تجربہ نہیں تھا اور نہ ہی اس کی اس حوالے سے تربیت کی گئی تھی۔ چنانچہ جب اس کے آفیسر نے اسے اس کام کا حکم دیا تو وہ شدید ذہنی تناﺅ کا شکار ہو گیا اور کچھ ہفتے بعد ہی اس نے پنکھے سے پھندہ لے کر خودکشی کر لی۔ اس نے پہلے بھی کئی سال افغانستان میں نوکری کی اور وہ شدید ڈپریشن کا شکار تھا، لیکن اس کی ڈپریشن کو نظرانداز کرتے ہوئے اسے ایک بار پھر وہاں تعینات کر دیا گیا۔“

اپنا تبصرہ بھیجیں